تبلیغات
شیعه علماء کونسل پاکستان - ملت جعفریہ کے عظیم الشان اتحاد کی بے مثال تاریخی کامیابی، حکومت مطالبات ماننے پر مجبور،41 گھنٹے بعد کفن پوش دھرنا ختم کرنے کا اعلان




کراچی میں جاری کفن پوش دھرنا 41 گھنٹے کے بعد کامیابی سے اختتام پذیر ہوا ۔ رپورٹ کے مطابق شیعہ علماء کونسل سندھ کے سیکریٹری جنرل علامہ سید ناظر عباس تقوی کے اعلان کے بعد جس میں انہوں نے دھرنے کے دوسرا مرحلے کے آغاز کا حکم دیدیا تھا جس میں پورے سندھ کو دہرنوں اور شاہراہوں کو بلاک کرنے کا اعلان کر دیا تھا ۔اس  اعلان کے بعد حکومت  مذاکرات پر مجبور ہو گئی اور علماء کی ٹیم سے کئی گھنٹوں تک مذاکرات کا سلسلہ جاری رہا ۔ جعفریہ پریس کی رپورٹ کے مطابق مذاکرات میں علامہ ناظر عباس تقوی، مولانا صادق رضا تقوی، علامہ مرزا یوسف حسین، قاسم نقوی، علامہ جعفر سبحانی، علامہ شبیر حسین میثمی سمیت تمام تنظیموں کے نمائندگان بشمول شیعہ علماء کونسل پاکستان ، مجلس وحدت مسلمین، آئی ایس او ، جے ایس او ، جعفریہ یوتھ ، شیعہ ایکشن کمیٹی، تنظیم عزا ، قیام ، پیام ولایت فاونڈیشن موجود تھے ۔ تفصیلات کے مطابق 4 گھنٹوں کے مذاکرات میں وفد کے تمام مطالبات منظور کرلئے گئے ۔ جس پر تمام تنظیموں نے اطمینان کا اظہار کیاجس کا اعلان علامہ ناظر عباس تقوی نے نماز فجر کے بعد کیا ۔
علامہ ناظر عباس تقوی نے اپنے اختتامی خطاب میں کہا کہ حکومت نے ہمارے مطالبات کو تسلیم کرلیا ہے، لہذا اس کفن پوش دھرنے کو ختم کرنے کا اعلان کرتے ہیں اور سندھ بھر کو جام کرنے کی دی جانے والی کال کو واپس لیتے ہیں۔  
انہوں نے مزید کہا کہ ہمیں معلوم ہے، کچھ عناصر سستی شہرت کیلئے اس عظیم قومی اتحاد کے مظہر،  تاریخی دھرنے کی کامیابی کو زائل کرنے کیلئے منفی پروپبگنڈوں کا سہارا لینگے، مگر ہمیں کوئی پروہ نہیں کیونکہ ہمارا ضمیر مطمئن ہے، خدا اور امام زمانہ ہم سے راضی ہوئے ہیں،  ہمارے ساتھ تمام تنظیموں کے نمائندے مذاکرات میں موجود تھے اور الحمد اللہ ہم سرخرو ہوئے ہیں۔
مذاکراتی کمیٹی کے بعض مطالبات یہ تھے کہ آئندہ کسی پر بھی جھوٹا توہین رسالت کا مقدمہ قائم نہیں کیا جائے اور اس سلسلے میں موجود قانونی پیچیدگیوں کو دور کیا جائے گا، علامہ آفتاب حیدر جعفری و دیگر شہدا کے قاتل فی الفور گرفتار کئے جائیں، دہشت گردوں کی سیاسی سرپرستی کرنے والے عناصر کے خلاف کارروائی کی جائے، قراقرم یونیورسٹی کے جن لڑکوں پر تعلیم کے دروازے بند کئے گئے ان تک تعلیم کی رسائی کو یقینی بنایا جائے، جن مجرمان کی سزائے موت پر عملدر آمد کو صدر زرداری کے حکم پر روکا گیا ہے ان کی سزا پر عملدرآمد یقینی بنایا جائے، جو این جی اوز سزائے موت کی سزا کو ختم کرانے کے لئے کوشاں ہیں ان کے خلاف قانونی کارروائی کی جائے، شہدا کے خانوادگان میں سے کسی ایک فرد کو سرکاری ملازمت فراہم کی جائے۔
جعفریہ پریس کی تفصیلات کے مطابق وہ حکومت جو ملت جعفریہ کو تسلیم کرنے سے گریزان نظر آتی تھی اور مذاکرات کیلئے تیار ہی نہیں ہو رہی تھی اس سے کئی گھنٹوں سے مذاکرات جاری رکھنا اور تمام تر مطالبات کو منظور کرانا ملت جعفریہ کے عظیم الشان اتحاد کا نتیجہ ہے ۔ ملت جعفریہ کے اسی بے بدیل  اتحاد سے استعماری اور اندرونی شرپسند قوتیں آج شکست خوردہ نظر آرہی ہیں ۔ تمام ملت جعفریہ کو ہوشیار رہنا چاہئے اب یہ قوتیں آپ کے اس عظیم کامیابی کو کم اثر اور بے سود جلوہ دینے لگے گیں ۔حالانکہ اس کامیابی کے نتائج نہ صرف کراچی بلکہ پورے پاکستان میں سامنے آئیں گے .


  • آخرین ویرایش:-
نظرات()   
   
unarmedjurist7725.unblog.fr
سه شنبه 24 مرداد 1396 09:46 ق.ظ
Hello just wanted to give you a quick heads up. The text in your
content seem to be running off the screen in Chrome.
I'm not sure if this is a format issue or something to do with
web browser compatibility but I thought I'd post to let you know.
The design look great though! Hope you get the problem resolved soon. Kudos
 
لبخندناراحتچشمک
نیشخندبغلسوال
قلبخجالتزبان
ماچتعجبعصبانی
عینکشیطانگریه
خندهقهقههخداحافظ
سبزقهرهورا
دستگلتفکر
آخرین پست ها

بزدلانہ اقدامات سے نہ تو زائرین کی مقدس ہستیوں کے حوالے سے عقیدت و احترام میں کمی لائی جاسکتی ہے اور نہ ہی ان کے شوق زیارت کودبایا جاسکتا ہے۔ ..........یکشنبه 1 تیر 1393

شیعہ علماء کونسل پنجاب کا سانحہ ماڈل ٹاون لاہور میں جانبحق ہونیوالے عوامی تحریک پاکستان کے کارکنان کی رسم قل خوانی میں شرکت اور خطاب ..........یکشنبه 1 تیر 1393

آزادی صحافت کے حامی ہیں، حکومت مثبت تنقید برداشت کرے، صحافی برادری بھی ذمہ داری کا مظاہرہ کرتے ہوئے ضابطہ اخلاق مرتب کرے، شیعہ علماء کونسل ..........یکشنبه 1 تیر 1393

ہمسائیہ ملک سے تعلقات بہتر ہونے چاہئیں مگر مسئلہ کشمیر کے حل کو اولیت دی جائے، قائد ملت جعفریہ پاکستان ..........چهارشنبه 7 خرداد 1393

کربلا فقط ایک واقعہ یا مصائب و آلام کی علامت نہیں بلکہ ایک تحریک اور نظام کا نام ہے ; قائد ملت جعفریہ پاکستان ..........چهارشنبه 7 خرداد 1393

علامہ محمد رمضان توقیرنے حضرت آیت اللہ سید محمد باقر شیرازی کی وفات پران کے اہل خانہ سے فاتحہ خوانی کی اورقائد ملت جعفریہ پاکستان کا تعزیتی پیغام پہنچایا ..........چهارشنبه 7 خرداد 1393

شیعہ علماءکونسل صوبہ خیبر پختون خواہ کے صوبائی صدرعلامہ محمد رمضان توقیرنے دفترقائد ملت جعفریہ پاکستان شعبہ مشہد کا دورہ کیا ..........چهارشنبه 7 خرداد 1393

جعفریہ یوتھ کے نوجوان مستقبل کی امید اور انقلاب کے لیے اولین معاون ثابت ہوں گے‘ علامہ ساجد نقوی ..........شنبه 3 خرداد 1393

ملک سے دہشت گردوں کا خاتمہ اورامن وامان بحال کرنا ریاست کی ذمہ داری ہے،قائد ملت جعفریہ پاکستان ..........شنبه 3 خرداد 1393

قائد ملت جعفریہ پاکستان حضرت آیت اللہ علامہ سید ساجد علی نقوی کا دورہ نوابشاہ سندھ، مومنین کا شاندار استقبال ..........شنبه 3 خرداد 1393

حراموش میں اسلامی تحریک پاکستان وشیعہ علماء کونسل کے سیاسی سیل کا اہم اجلاس ..........شنبه 3 خرداد 1393

شیعہ علماء کونسل گلگت کا اہم ڈویژنل تنظیمی اجلاس،علامہ شیخ سجاد حسین قاسمی کونیا صدرمنتخب کرلیا گیا ..........شنبه 3 خرداد 1393

اسلامی تحریک پاکستان و شیعہ علماء کونسل کے سیاسی سیل کا دورہ نگرل، انجمن حیدریہ نگرل کا اسلامی تحریک پاکستان پرمکمل اعتماد کا اظہار ..........شنبه 3 خرداد 1393

شیعہ علماء کونسل و اسلامی تحریک پاکستان کے سیاسی سیل کے وفد کی امام جمعہ والجماعت جامع مسجد گلگت آغا سید راحت حسین الحسینی سےخصوصی ملاقات ..........شنبه 3 خرداد 1393

کیا آپ کو معلوم ہے..........یکشنبه 14 اردیبهشت 1393

همه پستها