تبلیغات
شیعه علماء کونسل پاکستان - گلگت بلتستان کو پانچواں صوبہ بنانے کا مطالبہ کا اعزاز بھی ہمیں حاصل رہا


 

آپ تاریخ کی اس ناقابل تردید حقیقت سے بخوبی واقف ہیں کہ قوموں کا عروج و زوال ان کے کردار عمل کے رہین منت ہے ، وہی قومیں ترقی کے سفر میں کامیابیاں حاصل کرسکتی ہیں جن میں جذبہ حب الوطنی ، اتحاد و اتفاق ، ہمکاری و یکجہتی اور در پیش خطرات سے نمٹنے کی مضبوط قوت مدافعت موجود ہو ۔ جب تک ہم اپنے کردار و عمل سے اپنے طریق بود و باش میں اصلاحی پہلو کو اجاگر نہیں کریں گے اس وقت تک بہتری کی امید نہیں کی جاسکتی ۔ عصر حاضر میں چہار سو استحصال ، ظلم و ناانصافی اور بربریت کا بازار گرم ہے ۔ بالخصوص مادر وطن میں کرپشن ، انتہا پسندی ، دہشتگردی اور ٹارگٹ کلنگ اپنی انتہا کو پہنچی ہوئی ہے ۔ ایسی صورت میں مزید خاموشی قوموں کے زوال کا مترادف ہے ۔

ستم ظریفی ہے کہ 60 سال سے زئد عرصہ بیت چکا ہے پھر بھی گلگت بلتستان کو آئینی حقوق سے مسلسل محروم رکھا ہوا ہے ، اس ضمن میں اب تک جتنی بھی صدائیں بلند ہوئیں وہ صدا بہ صحرا ثابت ہوئیں ۔ مسئلہ کشمیر جو کہ اقوام عالم کے چارٹر پہ حل طلب ہے اس کی ہمدردی میں حکمرانوں نے ہر وقت مگر مچھ کے آنسو بہائے لیکن گلگت بلتستان کے آئینی حقوق پہ اب تک ہمدردانہ غور و خوص نہیں کیا گیا جسکی جتنی بھی مذمت کی جائے کم ہے ۔


اسلامی تحریک پاکستان نے علاقے میں سیاسی شعور اجاگر کرنے اور مظلوموں کی دادرسی کیلئے میں نہایت اہم کردار ادا کیا ہے ۔ اس سلسلے پر سیاسی سطح پر اجتماعی انتخابات میں مثالی کامیابی حاصل کی اور دوسرے الیکشن مین حکومت بھی قائم کی ۔ نیز شمالی علاقہ جات کونسل سے شمالی علاقہ جات قانون ساز کونسل کی بنیادد رکھنے میں میں کلیدی کردار ادا کیا ۔ ساتھ ہی گلگت بلتستان کو شناخت دینے اور اصلاحات لانے میں بھی بڑا اہم کردار ادا کیا ہے ۔ اور اس ضمن میں گلگت بلتستان کو پانچواں صوبہ بنانے کا مطالبہ کا اعزاز بھی ہمیں حاصل رہا ۔


مگر افسوس یہ ہے کہ تحریک جعفریہ پر بلا جواز پابندی لگائی گئی تا کہ حق پرستوں کی آواز کو دبا کر مفاد پرست حکومران اپنے مذموم مقاصد حاصل کرنے میں کامیاب ہوں ۔ لیکن 2013 کے عام انتخابات میں اسلامی تحریک جعفریہ پاکستان نے بھر پور حصہ لیا اور اپنے آپ کوثابت کیا ک نیز اسلامی تحریک پاکستان نے ملک بھر میں فرقہ واریت کو شکست دی اور قومی دھارے میں ملکی مفاد میں کردار ادا کیا ۔


اسلامی تحریک پاکستان گلگت بلتستان کی اہمیت اور حساسیت سے بخوبی واقف ہے اور یہ بات آپ سے مخفی نہیں کہ جب ہم نے سیاسی کردار نا روا پابندی کے سبب ادا نہیں کرسکے تو گلگت بلتستان کو مختلف عناصر نے مشق ستم بنایا اور علاقے کو فرقہ واریت کی دلدل میں دکھیلنے کی بھرپور کوشش کی گئی ۔ اس خوبصورت سیاحی مقام کی سیاحت متاثر کی اور پوری دنیا میں جی بی کے حسین چہرہ کو داغدار کیا گیا اور اغیار کو خوشامدی کیلئے پاک چین دوستی میں رخنہ اندازی کی مذموم کوشش کی گئی ۔


آپ جانتے ہیں کہ اسلامی تحریک پاکستان نے ہمیشہ ملک میں سیاسی استحکام اور جمہوری روایات کے عملی قیام کے لئے جد و جہد کی ہے اور جمہوریت کے فروغ اور عوام کے حقوق کی خاطر ہراول دستے کا کردار ادا کرتی رہی ہے ۔ یہ حقیقت آپ سے ڈھکی چھپی نہیں ہے کہ ملکی سطح پر متحدہ مجلس عمل اور ملی یکجہتی کونسل پاکستان میں ہمارا کردار کسی سے پوشیدہ نہیں جبکہ اتحاد امت میں جس طرح قائد ملت جعفریہ پاکستان حضرت آیت اللہ علامہ سید ساجد علی نقوی نے کردار ادا کیا ہے وہ سب کے سامنے ہے ۔


اسلامی تحریک نے ہمیشہ چاروں صوبوں سمیت آزاد کشمیر اور گلگت بلتستان کے عوام کے آئینی و قانونی حقوق کی آواز بلند کی ہے ۔ اس کا تذکرہ پہلے بھی کیا ہے تکرارا پہر بھی کیا جاتا ہے کہ مسئلہ کشمیر کا حل نہایت ضروری ہے اور اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق اس قضیہ کا منصفانہ حل کشمیری بہائیوں کو حق خودداریت دینے میں مضمر ہے ۔ جہاں تک گلگت بلتستان کا سوال ہے ہمارا شروع سے یہ موقف رہا ہے کہ ہم گلگت بلتستان کو ملک کا پانچواں سمجھتے ہین اور مطالبہ کرتے ہیں کہ گلگت بلتستان کے عوام کی خواہشات کا احترام کرتے ہوئے انہیں آئینی و قانونی حقوق دئے جائیں اور بلا تاخیر گلگت بلتستان کو ملک کے پانچویں صبے کا درجہ دیا جائے ۔


اسلامی تحریک پاکستان کے سیاسی سیک کا حال ہی میں اہم اجلاس ہوا جس میں فیصلہ کیا گیا ہے کپ اسلامی تحریک پاکستان ملک کے عام انتخابات 2013 کی طرح گلگت بلتستان کے 2014 میں ہانے والے انتخابات میں بھی ماضی کے طرز پر بھر پور حصہ لیگی اور قانون ساز اسمبلی میں پہنچ کر گلگت بلتستان کے عوام کے حقوق کی آواز بلند کریگی ۔ ہم حکومت پاکستان سے یہ بھی مطالبہ کرتے ہیں کہ گلگت بلتستان کے عوام کی ترجمانی کیلئے ایوان بالا اور ایوان زیریں میں بھی مناسب نمائندگی دی جائے کیونکہ محل وقوع کے اعتبار سے گلگت بلتستان انتہائی اہم اور غیر معمولی اہمیت کا حامل علاقہ ہے جس کی کوئی انکار نہیں کرسکتا ۔ گلگت بلتستان کے استحکام میں پاک چین دوستی مضمر ہے ۔


اسلامی تحریک نے یہ بھی فیصلہ کیا ہے کہ بلدیاتی انتخابات میں بھی بھر پور حصہ لیا جائے گا ۔ البتہ ہم الیکشن کمیشن آف پاکستان سے مطالبہ کرتے ہیں کہ دھاندلی کی روک تھام کیلئے عملی اقدامات اٹھائے جائیں تا کہ اس طرح کے واقعات رونما نہ ہوسکے جس طرح کی خبریں عام انتخابات کے نتائج کے حوالے سے ہرزبان زدعام ہیں ۔


  • آخرین ویرایش:-
نظرات()   
   
http://voncilegarlits.hatenablog.com/archive/2016/03/01
سه شنبه 24 مرداد 1396 01:18 ب.ظ
Thank you for the good writeup. It in fact was a amusement account
it. Look advanced to far added agreeable from you!
By the way, how could we communicate?
 
لبخندناراحتچشمک
نیشخندبغلسوال
قلبخجالتزبان
ماچتعجبعصبانی
عینکشیطانگریه
خندهقهقههخداحافظ
سبزقهرهورا
دستگلتفکر
آخرین پست ها

بزدلانہ اقدامات سے نہ تو زائرین کی مقدس ہستیوں کے حوالے سے عقیدت و احترام میں کمی لائی جاسکتی ہے اور نہ ہی ان کے شوق زیارت کودبایا جاسکتا ہے۔ ..........یکشنبه 1 تیر 1393

شیعہ علماء کونسل پنجاب کا سانحہ ماڈل ٹاون لاہور میں جانبحق ہونیوالے عوامی تحریک پاکستان کے کارکنان کی رسم قل خوانی میں شرکت اور خطاب ..........یکشنبه 1 تیر 1393

آزادی صحافت کے حامی ہیں، حکومت مثبت تنقید برداشت کرے، صحافی برادری بھی ذمہ داری کا مظاہرہ کرتے ہوئے ضابطہ اخلاق مرتب کرے، شیعہ علماء کونسل ..........یکشنبه 1 تیر 1393

ہمسائیہ ملک سے تعلقات بہتر ہونے چاہئیں مگر مسئلہ کشمیر کے حل کو اولیت دی جائے، قائد ملت جعفریہ پاکستان ..........چهارشنبه 7 خرداد 1393

کربلا فقط ایک واقعہ یا مصائب و آلام کی علامت نہیں بلکہ ایک تحریک اور نظام کا نام ہے ; قائد ملت جعفریہ پاکستان ..........چهارشنبه 7 خرداد 1393

علامہ محمد رمضان توقیرنے حضرت آیت اللہ سید محمد باقر شیرازی کی وفات پران کے اہل خانہ سے فاتحہ خوانی کی اورقائد ملت جعفریہ پاکستان کا تعزیتی پیغام پہنچایا ..........چهارشنبه 7 خرداد 1393

شیعہ علماءکونسل صوبہ خیبر پختون خواہ کے صوبائی صدرعلامہ محمد رمضان توقیرنے دفترقائد ملت جعفریہ پاکستان شعبہ مشہد کا دورہ کیا ..........چهارشنبه 7 خرداد 1393

جعفریہ یوتھ کے نوجوان مستقبل کی امید اور انقلاب کے لیے اولین معاون ثابت ہوں گے‘ علامہ ساجد نقوی ..........شنبه 3 خرداد 1393

ملک سے دہشت گردوں کا خاتمہ اورامن وامان بحال کرنا ریاست کی ذمہ داری ہے،قائد ملت جعفریہ پاکستان ..........شنبه 3 خرداد 1393

قائد ملت جعفریہ پاکستان حضرت آیت اللہ علامہ سید ساجد علی نقوی کا دورہ نوابشاہ سندھ، مومنین کا شاندار استقبال ..........شنبه 3 خرداد 1393

حراموش میں اسلامی تحریک پاکستان وشیعہ علماء کونسل کے سیاسی سیل کا اہم اجلاس ..........شنبه 3 خرداد 1393

شیعہ علماء کونسل گلگت کا اہم ڈویژنل تنظیمی اجلاس،علامہ شیخ سجاد حسین قاسمی کونیا صدرمنتخب کرلیا گیا ..........شنبه 3 خرداد 1393

اسلامی تحریک پاکستان و شیعہ علماء کونسل کے سیاسی سیل کا دورہ نگرل، انجمن حیدریہ نگرل کا اسلامی تحریک پاکستان پرمکمل اعتماد کا اظہار ..........شنبه 3 خرداد 1393

شیعہ علماء کونسل و اسلامی تحریک پاکستان کے سیاسی سیل کے وفد کی امام جمعہ والجماعت جامع مسجد گلگت آغا سید راحت حسین الحسینی سےخصوصی ملاقات ..........شنبه 3 خرداد 1393

کیا آپ کو معلوم ہے..........یکشنبه 14 اردیبهشت 1393

همه پستها