تبلیغات
شیعه علماء کونسل پاکستان - ملکی آئین کے مطابق ہمیں عزاداری سید الشہداء پر کوئی قدغن قابل قبول نہیں عوام عزاداری سید الشہداء بھر پور طریقہ سے جاری رکھیں، قائد ملت جعفریہ پاکستان


ملکی آئین کے مطابق ہمیں عزاداری سید الشہداء پر کوئی قدغن قابل قبول نہیں ، عوام عزاداری سید الشہداء بھر پور طریقہ سے جاری رکھیں،قائد ملت جعفریہ پاکستان
جعفریہ پریس- قائد ملت جعفریہ پاکستان حضرت آیت اللہ علامہ سید ساجد علی نقوی نے  ملک کی موجودہ امن وامان کی صورتحال خصوصاً سانحہ عاشور راولپنڈی، ملتان، چشتیاں، ہنگواور حالیہ سانحہ کراچی سمیت ملک کے دیگرحصوں میں پیش آنیوالے واقعات کے تناظر میں ایک اہم پریس کانفرنس سے خطاب کیا- قائد ملت جعفریہ نے صحافیوں کو خوش آمدید کہتے ہو ئے کہا کہ آپ کو یہاں زحمت دینے کا مقصد حالیہ سانحہ راولپنڈی کے المناک واقعہ اور اس کے بعد پیش آنیوالے واقعات کے بارے چند گزارشات آپ کے توسط سے قوم کے سامنے رکھنا چاہتے ہیں۔
حضرت آیت اللہ علامہ سید ساجد علی نقوی نے کہا کہ ہم سانحہ عاشور راولپنڈی مساجد ،مدارس، امام بارگاہوں،املاک کے نقصان کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہیں اور مطالبہ کرتے ہیں کہ اصل مجرموں کو کیفر کردار تک پہنچایا جائے لیکن ہم یہ بھی واضح کردینا چاہتے ہیں کہ یوم عاشور پر ہونیوالا واقعہ صرف ایک واقعہ نہیں بلکہ سانحہ تھا جسمیں کئی انسانی جانوں کاضیاع کے ساتھ ساتھ کاروبار اور املاک کا بڑ انقصان ہو ا۔جو اپنے پیچھے بہت سے سوالات چھوڑ گیا ہے سانحہ سے ایک روز قبل جلوس کو روکنے کے لئے سوشل میڈیا (ٹیو ٹر) پر کون سے میسج کس کی طرف سے چلائے گئے؟کیا یہ سانحہ کسی منظم سازش اور منصوبہ بندی کے تحت تورونما نہیں کرایا گیا ؟اس کے پیچھے کون سے عوامل ہیں اور ان کے مقاصد کیا تھے؟ سانحہ کو مذہبی رنگ دیکر قوم سے حقائق چھپانے کی کوشش تو نہیں کی جارہی؟ کس کے ایماء پر اشتعال انگیزی ہوئی ؟پتھراو اور فائرنگ کس نے کی ؟ آناً فاناً مارکیٹ میں آگ کیسے لگی؟ آگ لگانے کے وسائل کہاں سے آئے ؟ انسانی جانوں کا ضیاع کیسے ہوا؟ واقعہ کے بعد مسلح دستوں کو کیوں کنٹرول نہ کیا گیا ؟ ان تمام حالات میں انتظامیہ ، پولیس اور دیگرسیکورٹی اداروں کا کردار کیا رہا ؟ اطلاعات کے باوجود ان متاثرہ مساجد و امام بارگاہوں کے سیکورٹی کے انتظامات کیوں نہ کئے گئے؟
قائد ملت جعفریہ نے مزید کہا کہ یوم عاشور صرف امسال ہی جمعہ کے روز نہیں آیا بلکہ اس سے پہلے بھی کئی مرتبہ یوم عاشورجمعہ کے روز آیا اور اسی روٹ سے جلوس عاشور ہمیشہ پرامن طور پر گزرتا رہا لیکن اس سال انتہائی سنگین سانحہ کیوں پیش آیا ؟ اس کے علاوہ بہت سے سوالات ہیں جن کے صحیح جوابات عوام جاننا چاہتے ہیں جوکہ نہ صرف قابل تشویش ہے۔ اگر حقائق قوم کو نہ بتائے گئے تو اس کے مستقبل قریب میں معاشرے پر مضر اثرات بھی مرتب ہوسکتے ہیں۔اس سانحہ کے بعد ہمارے مطالبے پر جوڈیشل کمیشن کی تشکیل کا قیام احسن اقدام ہے جوڈیشل کمیشن سے ہمیں توقع ہے کہ وہ غیر جانبداری سے حقائق کو عوام کے سامنے منظر عام پرلائیں اور مساجد و امام باگاہ اور ملحقہ املاک کا بھی دورہ کرکے نقصانات،حقائق اور واقعات کا جائزہ لے کر انصاف کے تقاضوں کو پوراکریں۔
انہوں نے کہا کہ ہمارا اول دن سے اتحاد و یگانگت کا درس رہا ہے اور اس ملک میں ہم اتحاد امت کے بانیان اور داعی ہیں اتحاد و وحدت کے ہر قومی پلیٹ فارم پر ہم نے بھرپور کردار ادا کیا ہے جبکہ محرم الحرام میں بھی انتظامیہ کے ساتھ ہمیشہ بھرپور معاونت کی۔اس سے قبل بھی اس طرح کے واقعات رونما ہوئے جن پر نہ تو کوئی کمیشن بنایا گیا اور نہ ہی آج تک کوئی اقدامات کئے گئے۔ کوئٹہ میں ہزارہ برادری کو ٹارگٹ کیا گیا، ایک روز میں 100 سے زائد افراد کو شہید کردیا گیا، کراچی میں عباس ٹاؤن کا سانحہ سب کے سامنے ہے، پشاو ر میں قصہ خوانی بازار سانحہ، سانحہ چلاس ، سانحہ ہزار گنجی سمیت متعدد ایسے سانحات ہیں جن میں ملت تشیع کو خاص طور پر ٹارگٹ کا نشانہ بنایا گیا مگر اس کے رد عمل میں ہم نے انتہائی صبر کا مظاہرہ کیا، بسوں سے اتار کر لوگوں کو شناخت کرکے ٹارگٹ کیا گیا، زیارات پر جانیوالے بے یارومددگار لوگوں کو ٹارگٹ کرکے بموں سے اڑا دیا گیا مگر ہم نے صبر و تحمل کا مظاہرہ کیا اور قانون کی عملداری یقینی بنانے کا مطالبہ کیا۔ مگر ان معاملات پر کوئی کمیشن قائم کیا گیا نہ ، انکوائری کمیٹی تشکیل دی گئی ۔ یوم عاشورہونیوالے سانحہ کے بعد راولپنڈی میں 7امام بارگاہوں کو نشانہ بنایاگیا امام بارگاہوں کے متولیوں کے گھروں کو نشانہ بنا کر سامان تک لوٹ لیا گیا، قرآن پاک کو شہید کردیا گیا ہے اس جانب کیوں توجہ نہیں دی جارہی ہے اور کیوں مجرمانہ غفلت وخاموشی کا مظاہرہ کیا جارہاہے۔
اسلامی تحریک پاکستان کے سربراہ کہا کہ امن وامان کے حوالے سے پاکستان کے حاالات ناگفتہ بہ ہیں دہشت گردی عرو ج پر ہے اتنے عرصہ سے دہشت گردوں پر کوئی آ ہنی ہاتھ نہیں ڈالا گیا یہ لو گ اصل میں پاکستان کے دشمن ہیں اس ملک میں فرقہ واریت نہیں بلکہ دہشت گردی ہے اور یہ دہشت گرد ہر مسلک کے دشمن ہیں اور پھر جس ملک میں جرم کے بعد سزا کا عمل نہ ہو جس ملک کی جیلیں محفوظ نہ ہوں ،جس ملک میں قرآنی قانون قصاص کو معطل کرکے رکھا جائے تو اس ملک میں امن قائم کیسے ہوگا؟۔ہم یہ سمجھتے ہیں کہ قرآنی قانون کو پس پشت ڈال کر اس ملک میں دہشت گردوں کی حوصلہ افزائی کی گئی ہے لیکن ہم نے آج تک ملک میں ہونے والی دہشت گردی کے حوالے سے کسی مسلک کے اوپر الزام نہیں لگایا ۔یہ دہشت گرد امت مسلمہ کے دشمن ہیں ۔ ہمارے نزدیک تمام مذاہب ، مسالک اور مکاتب کے مقدسات ، مساجد ، مدارس ، امام بارگاہیں ، جلوس ہائے عزادار امام حسین علیہ السلام ،عوام کی جان و مال وا ملاک محتر م ہیں ۔اُن کا احترام اور حفاظت ہر شہری کی ذمہ داری ہے ۔عوام سے بھر پور مطالبہ کرتے ہیں کی باہمی اتحاد واتفاق ،رواداری ، صبر،حو صلہ ،تحمل و برداشت اور بھائی چارے کی فضا کو برقرار رکھیں ہم سمجھتے ہیں کہ یہ سانحہ ملکی وحدت کو پارا پارا کرنے کی گھناؤنی سازش ہے تاکہ اس ملک میں فرقہ واریت کی آگ کو بھڑکا کر ملک دشمن عناصر اپنی مذموم کارروائیوں میں کامیاب ہوں مگر ہم اس سازش کو کامیاب نہیں ہونے دیں گے،تمام مسالک کے جمیع علماء کرام فرقہ واریت کی سازش کو ناکام بنانے کے لئے کردار ادا کریں۔
قائد ملت جعفریہ پاکستان حضرت آیت اللہ علامہ سید ساجد علی نقوی نے کہا کہ آ خر میں عوام کے لئے ہمارا پیغام ہے کہ عزاداری سید الشہداء ہمارا آئینی حق ہے ہماری شہری آزادیوں اور بنیادانسانی حقوق کا مسئلہ ہے ۔ ملکی آئین کے مطابق ہمیں عزاداری سید الشہداء پر کوئی قدغن قابل قبول نہیں ، عوام عزاداری سید الشہداء بھر پور طریقہ سے جاری رکھیں کیونکہ عزاداری ظلم کے خلاف احتجاج اور مظلوم کی حمایت کی تحریک ہے ۔

  قائد ملت جعفریہ پاکستان حضرت آیت اللہ علامہ سید ساجد علی نقوی نے ملک کی موجودہ امن وامان کی صورتحال خصوصاً سانحہ عاشور راولپنڈی، ملتان، چشتیاں، ہنگواور حالیہ سانحہ کراچی سمیت ملک کے دیگرحصوں میں پیش آنیوالے واقعات کے تناظر میں ایک اہم پریس کانفرنس سے خطاب کیا- قائد ملت جعفریہ نے صحافیوں کو خوش آمدید کہتے ہو ئے کہا کہ آپ کو یہاں زحمت دینے کا مقصد حالیہ سانحہ راولپنڈی کے المناک واقعہ اور اس کے بعد پیش آنیوالے واقعات کے بارے چند گزارشات آپ کے توسط سے قوم کے سامنے رکھنا چاہتے ہیں۔
حضرت آیت اللہ علامہ سید ساجد علی نقوی نے کہا کہ ہم سانحہ عاشور راولپنڈی مساجد ،مدارس، امام بارگاہوں،املاک کے نقصان کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہیں اور مطالبہ کرتے ہیں کہ اصل مجرموں کو کیفر کردار تک پہنچایا جائے لیکن ہم یہ بھی واضح کردینا چاہتے ہیں کہ یوم عاشور پر ہونیوالا واقعہ صرف ایک واقعہ نہیں بلکہ سانحہ تھا جسمیں کئی انسانی جانوں کاضیاع کے ساتھ ساتھ کاروبار اور املاک کا بڑ انقصان ہو ا۔جو اپنے پیچھے بہت سے سوالات چھوڑ گیا ہے


سانحہ سے ایک روز قبل جلوس کو روکنے کے لئے سوشل میڈیا (ٹیو ٹر) پر کون سے میسج کس کی طرف سے چلائے گئے؟کیا یہ سانحہ کسی منظم سازش اور منصوبہ بندی کے تحت تورونما نہیں کرایا گیا ؟اس کے پیچھے کون سے عوامل ہیں اور ان کے مقاصد کیا تھے؟ سانحہ کو مذہبی رنگ دیکر قوم سے حقائق چھپانے کی کوشش تو نہیں کی جارہی؟ کس کے ایماء پر اشتعال انگیزی ہوئی ؟پتھراو اور فائرنگ کس نے کی ؟ آناً فاناً مارکیٹ میں آگ کیسے لگی؟ آگ لگانے کے وسائل کہاں سے آئے ؟ انسانی جانوں کا ضیاع کیسے ہوا؟ واقعہ کے بعد مسلح دستوں کو کیوں کنٹرول نہ کیا گیا ؟ ان تمام حالات میں انتظامیہ ، پولیس اور دیگرسیکورٹی اداروں کا کردار کیا رہا ؟ اطلاعات کے باوجود ان متاثرہ مساجد و امام بارگاہوں کے سیکورٹی کے انتظامات کیوں نہ کئے گئے؟

قائد ملت جعفریہ نے مزید کہا کہ یوم عاشور صرف امسال ہی جمعہ کے روز نہیں آیا بلکہ اس سے پہلے بھی کئی مرتبہ یوم عاشورجمعہ کے روز آیا اور اسی روٹ سے جلوس عاشور ہمیشہ پرامن طور پر گزرتا رہا لیکن اس سال انتہائی سنگین سانحہ کیوں پیش آیا ؟ اس کے علاوہ بہت سے سوالات ہیں جن کے صحیح جوابات عوام جاننا چاہتے ہیں جوکہ نہ صرف قابل تشویش ہے۔ اگر حقائق قوم کو نہ بتائے گئے تو اس کے مستقبل قریب میں معاشرے پر مضر اثرات بھی مرتب ہوسکتے ہیں۔اس سانحہ کے بعد ہمارے مطالبے پر جوڈیشل کمیشن کی تشکیل کا قیام احسن اقدام ہے جوڈیشل کمیشن سے ہمیں توقع ہے کہ وہ غیر جانبداری سے حقائق کو عوام کے سامنے منظر عام پرلائیں اور مساجد و امام باگاہ اور ملحقہ املاک کا بھی دورہ کرکے نقصانات،حقائق اور واقعات کا جائزہ لے کر انصاف کے تقاضوں کو پوراکریں۔

انہوں نے کہا کہ ہمارا اول دن سے اتحاد و یگانگت کا درس رہا ہے اور اس ملک میں ہم اتحاد امت کے بانیان اور داعی ہیں اتحاد و وحدت کے ہر قومی پلیٹ فارم پر ہم نے بھرپور کردار ادا کیا ہے جبکہ محرم الحرام میں بھی انتظامیہ کے ساتھ ہمیشہ بھرپور معاونت کی۔اس سے قبل بھی اس طرح کے واقعات رونما ہوئے جن پر نہ تو کوئی کمیشن بنایا گیا اور نہ ہی آج تک کوئی اقدامات کئے گئے۔ کوئٹہ میں ہزارہ برادری کو ٹارگٹ کیا گیا، ایک روز میں 100 سے زائد افراد کو شہید کردیا گیا، کراچی میں عباس ٹاؤن کا سانحہ سب کے سامنے ہے، پشاو ر میں قصہ خوانی بازار سانحہ، سانحہ چلاس ، سانحہ ہزار گنجی سمیت متعدد ایسے سانحات ہیں جن میں ملت تشیع کو خاص طور پر ٹارگٹ کا نشانہ بنایا گیا مگر اس کے رد عمل میں ہم نے انتہائی صبر کا مظاہرہ کیا، بسوں سے اتار کر لوگوں کو شناخت کرکے ٹارگٹ کیا گیا، زیارات پر جانیوالے بے یارومددگار لوگوں کو ٹارگٹ کرکے بموں سے اڑا دیا گیا مگر ہم نے صبر و تحمل کا مظاہرہ کیا اور قانون کی عملداری یقینی بنانے کا مطالبہ کیا۔ مگر ان معاملات پر کوئی کمیشن قائم کیا گیا نہ ، انکوائری کمیٹی تشکیل دی گئی ۔ یوم عاشورہونیوالے سانحہ کے بعد راولپنڈی میں 7امام بارگاہوں کو نشانہ بنایاگیا امام بارگاہوں کے متولیوں کے گھروں کو نشانہ بنا کر سامان تک لوٹ لیا گیا، قرآن پاک کو شہید کردیا گیا ہے اس جانب کیوں توجہ نہیں دی جارہی ہے اور کیوں مجرمانہ غفلت وخاموشی کا مظاہرہ کیا جارہاہے۔

اسلامی تحریک پاکستان کے سربراہ کہا کہ امن وامان کے حوالے سے پاکستان کے حاالات ناگفتہ بہ ہیں دہشت گردی عرو ج پر ہے اتنے عرصہ سے دہشت گردوں پر کوئی آ ہنی ہاتھ نہیں ڈالا گیا یہ لو گ اصل میں پاکستان کے دشمن ہیں اس ملک میں فرقہ واریت نہیں بلکہ دہشت گردی ہے اور یہ دہشت گرد ہر مسلک کے دشمن ہیں اور پھر جس ملک میں جرم کے بعد سزا کا عمل نہ ہو جس ملک کی جیلیں محفوظ نہ ہوں ،جس ملک میں قرآنی قانون قصاص کو معطل کرکے رکھا جائے تو اس ملک میں امن قائم کیسے ہوگا؟۔ہم یہ سمجھتے ہیں کہ قرآنی قانون کو پس پشت ڈال کر اس ملک میں دہشت گردوں کی حوصلہ افزائی کی گئی ہے لیکن ہم نے آج تک ملک میں ہونے والی دہشت گردی کے حوالے سے کسی مسلک کے اوپر الزام نہیں لگایا ۔یہ دہشت گرد امت مسلمہ کے دشمن ہیں ۔ ہمارے نزدیک تمام مذاہب ، مسالک اور مکاتب کے مقدسات ، مساجد ، مدارس ، امام بارگاہیں ، جلوس ہائے عزادار امام حسین علیہ السلام ،عوام کی جان و مال وا ملاک محتر م ہیں ۔اُن کا احترام اور حفاظت ہر شہری کی ذمہ داری ہے ۔عوام سے بھر پور مطالبہ کرتے ہیں کی باہمی اتحاد واتفاق ،رواداری ، صبر،حو صلہ ،تحمل و برداشت اور بھائی چارے کی فضا کو برقرار رکھیں ہم سمجھتے ہیں کہ یہ سانحہ ملکی وحدت کو پارا پارا کرنے کی گھناؤنی سازش ہے تاکہ اس ملک میں فرقہ واریت کی آگ کو بھڑکا کر ملک دشمن عناصر اپنی مذموم کارروائیوں میں کامیاب ہوں مگر ہم اس سازش کو کامیاب نہیں ہونے دیں گے،تمام مسالک کے جمیع علماء کرام فرقہ واریت کی سازش کو ناکام بنانے کے لئے کردار ادا کریں۔

قائد ملت جعفریہ پاکستان حضرت آیت اللہ علامہ سید ساجد علی نقوی نے کہا کہ آ خر میں عوام کے لئے ہمارا پیغام ہے کہ عزاداری سید الشہداء ہمارا آئینی حق ہے ہماری شہری آزادیوں اور بنیادانسانی حقوق کا مسئلہ ہے ۔ ملکی آئین کے مطابق ہمیں عزاداری سید الشہداء پر کوئی قدغن قابل قبول نہیں ، عوام عزاداری سید الشہداء بھر پور طریقہ سے جاری رکھیں کیونکہ عزاداری ظلم کے خلاف احتجاج اور مظلوم کی حمایت کی تحریک ہے


  • آخرین ویرایش:سه شنبه 5 آذر 1392
نظرات()   
   
feet pain
جمعه 24 شهریور 1396 11:37 ب.ظ
Hello every one, here every one is sharing such experience, so it's fastidious to read this website, and
I used to go to see this blog everyday.
victorinacruice.wordpress.com
سه شنبه 24 مرداد 1396 12:50 ب.ظ
An outstanding share! I have just forwarded this onto a coworker who had
been conducting a little research on this. And he actually bought me breakfast because I discovered it for
him... lol. So allow me to reword this....
Thanks for the meal!! But yeah, thanks for spending the
time to discuss this issue here on your web site.
 
لبخندناراحتچشمک
نیشخندبغلسوال
قلبخجالتزبان
ماچتعجبعصبانی
عینکشیطانگریه
خندهقهقههخداحافظ
سبزقهرهورا
دستگلتفکر
آخرین پست ها

بزدلانہ اقدامات سے نہ تو زائرین کی مقدس ہستیوں کے حوالے سے عقیدت و احترام میں کمی لائی جاسکتی ہے اور نہ ہی ان کے شوق زیارت کودبایا جاسکتا ہے۔ ..........یکشنبه 1 تیر 1393

شیعہ علماء کونسل پنجاب کا سانحہ ماڈل ٹاون لاہور میں جانبحق ہونیوالے عوامی تحریک پاکستان کے کارکنان کی رسم قل خوانی میں شرکت اور خطاب ..........یکشنبه 1 تیر 1393

آزادی صحافت کے حامی ہیں، حکومت مثبت تنقید برداشت کرے، صحافی برادری بھی ذمہ داری کا مظاہرہ کرتے ہوئے ضابطہ اخلاق مرتب کرے، شیعہ علماء کونسل ..........یکشنبه 1 تیر 1393

ہمسائیہ ملک سے تعلقات بہتر ہونے چاہئیں مگر مسئلہ کشمیر کے حل کو اولیت دی جائے، قائد ملت جعفریہ پاکستان ..........چهارشنبه 7 خرداد 1393

کربلا فقط ایک واقعہ یا مصائب و آلام کی علامت نہیں بلکہ ایک تحریک اور نظام کا نام ہے ; قائد ملت جعفریہ پاکستان ..........چهارشنبه 7 خرداد 1393

علامہ محمد رمضان توقیرنے حضرت آیت اللہ سید محمد باقر شیرازی کی وفات پران کے اہل خانہ سے فاتحہ خوانی کی اورقائد ملت جعفریہ پاکستان کا تعزیتی پیغام پہنچایا ..........چهارشنبه 7 خرداد 1393

شیعہ علماءکونسل صوبہ خیبر پختون خواہ کے صوبائی صدرعلامہ محمد رمضان توقیرنے دفترقائد ملت جعفریہ پاکستان شعبہ مشہد کا دورہ کیا ..........چهارشنبه 7 خرداد 1393

جعفریہ یوتھ کے نوجوان مستقبل کی امید اور انقلاب کے لیے اولین معاون ثابت ہوں گے‘ علامہ ساجد نقوی ..........شنبه 3 خرداد 1393

ملک سے دہشت گردوں کا خاتمہ اورامن وامان بحال کرنا ریاست کی ذمہ داری ہے،قائد ملت جعفریہ پاکستان ..........شنبه 3 خرداد 1393

قائد ملت جعفریہ پاکستان حضرت آیت اللہ علامہ سید ساجد علی نقوی کا دورہ نوابشاہ سندھ، مومنین کا شاندار استقبال ..........شنبه 3 خرداد 1393

حراموش میں اسلامی تحریک پاکستان وشیعہ علماء کونسل کے سیاسی سیل کا اہم اجلاس ..........شنبه 3 خرداد 1393

شیعہ علماء کونسل گلگت کا اہم ڈویژنل تنظیمی اجلاس،علامہ شیخ سجاد حسین قاسمی کونیا صدرمنتخب کرلیا گیا ..........شنبه 3 خرداد 1393

اسلامی تحریک پاکستان و شیعہ علماء کونسل کے سیاسی سیل کا دورہ نگرل، انجمن حیدریہ نگرل کا اسلامی تحریک پاکستان پرمکمل اعتماد کا اظہار ..........شنبه 3 خرداد 1393

شیعہ علماء کونسل و اسلامی تحریک پاکستان کے سیاسی سیل کے وفد کی امام جمعہ والجماعت جامع مسجد گلگت آغا سید راحت حسین الحسینی سےخصوصی ملاقات ..........شنبه 3 خرداد 1393

کیا آپ کو معلوم ہے..........یکشنبه 14 اردیبهشت 1393

همه پستها